Loading...
دینک ٹربیون»بدلاؤ

گجرات میں پرچار کا آج انتم دن,پی ایم کر رہے ہیں سی پلین سے پرچار,راہل پہنچے مندر !    برفیلا ہماچل:جن جاتیہ شیتروں میں بیپٹری زندگی,پریٹن میں آئیگی گرماہٹ !    پنجاب نے دوگنی کی ودھائکوں کی میڈکل گرانٹ !    ہنیپریت,انیہ آروپی عدالت میں پیش !    پراپرٹی ڈیلر کی گولی مارکر ہتیا !    فریدآباد کی سینک کالونی میں اویدھ نرمان توڑے !    ابھی راجنیتی میں آنے کا ارادہ نہیں:خلیع !    بی بی سی آئی کی وشیش عام بیٹھک میں ہوئے فیصلے !    شکایت کرتا کی موت,بینک بچوں کو دیگا1.27کروڑ !    گوشالاؤں کے آرتھک سنکٹ پر کیا وچار !    

بدلاؤ› ›

خاص خبر

بیتے کل کی یادیں

Posted On September - 10 - 2017 Comments Off onبیتے کل کی یادیں
ریڈیو کے بارے میں کافی روچک باتیں سننے کو ملتی ہیں۔ پرانے زمانے میں ریڈیو امیروں کے ویبھو کا پرتیک ہوتا تھا۔ عام لوگوں کو کسی کاریہ کرم کو سننے کے لئے کسی جمیندار یا رئیس کے آنگن میں ایکتر ہوکر بیٹھنا پڑتا تھا۔....

ایک بیٹی کھوئی تو700بیٹی اپنا کر بنائیں سکشم

Posted On September - 10 - 2017 Comments Off onایک بیٹی کھوئی تو700بیٹی اپنا کر بنائیں سکشم
ورش1986میں پین ایم فلائٹ73جسمیں نیرجا بھنّوٹ بطور ورشٹھ پرچارکا تعینات تھیں,کو4آتنکوادیوں نے ممبئی سے نیویارک کی اڑان کے دوران پاکستان کے کراچی شہر میں ہائی جیک کر لیا تھا۔....

سسرال میں داماد نہیں رکتا تھا تو بیٹی بھی نہیں ہوتی تھی وداع

Posted On August - 27 - 2017 Comments Off onسسرال میں داماد نہیں رکتا تھا تو بیٹی بھی نہیں ہوتی تھی وداع
پرمپرائیں وہ نگینے ہیں,جوکہ ہماری سنسکرتی میں جڑے ہوتے ہیں۔ سمیہ کے ساتھ ان نگینوں کی چمک بیشک پھیکی پڑ جائے لیکن انکی قیمت کبھی کم نہیں ہوگی۔ جب جب بھی پرانے دور کو یاد کیا جائیگا,ان پرمپراؤں کا ذکر ضرور ہوگا۔ رٹائرڈ جے ای رتن لال شرما بیتے وقت کو یاد کر رہے ہیں۔ انکے مطابق اگر ہم پرانے وقت میں ساس بہو,داماد اور دوسرے رشتے نعتوں کی بات کریں تو اندازہ ہوتا ہے که اب سب کچھ اپچارکتا 

سوکھے پہاڑ پر فوجی نے اگا دیا جنگل

Posted On August - 27 - 2017 Comments Off onسوکھے پہاڑ پر فوجی نے اگا دیا جنگل
یہہ سال1973کی صبح تھی۔ بی ایس ایف میں تعینات جگت سنگھ چودھری چھٹ‍ٹی پر گھر آئے تھے اور اتراکھنڈ کے ردرپریاگ ضلعے کے اپنے گاؤں کوٹ ملا میں سیر کو نکلے تھے۔ تبھی چودھری کے سامنے ایک حادثہ گھٹ گیا۔ پہاڑی سے ایک گرامین مہلا جوکہ وہاں چارہ لینے آئی تھی,گر گئی۔ اس سے اسے گھاتک چوٹ پہنچی۔ پہاڑ پر اس طرح کے خطرے سامانیہ ہیں لیکن کوٹ ملا اور اسکے ساتھ لگتے دوسرے گاؤوں میں یہ جیسے روزانہ کی بات ہو 

آزادی کے لئے جو سپنے دیکھے تھے وہ ابھی ادھورے ہیں

Posted On August - 13 - 2017 Comments Off onآزادی کے لئے جو سپنے دیکھے تھے وہ ابھی ادھورے ہیں
آزادی دلانے میں جب ہریانہ کے سوتنترتا سینانیوں کے یوگدان کی چرچا ہوتی ہے تو جلا ریواڑی کے گاؤں لوکھی کا نام سہسہ سبھی کی زبان پر آ جاتا ہے۔ دیش کا شائد یہ اکلوتا ایسا گاؤں ہے,جہاں سے لگ بھگ50سوتنترتا سینانیوں نے آزادی کی لڑائی میں اپنا سب کچھ نیوچھاور کر دیا۔....

مہلا سرپنچ نے دلائی نشے سے آزادی

Posted On August - 13 - 2017 Comments Off onمہلا سرپنچ نے دلائی نشے سے آزادی
یہ ایک گاؤں کے بدلنے کی کہانی ہے۔ ہماچل پردیش کے منڈی ضلعے کا تھارجون گاؤں اب پہلے جیسا نہیں رہا۔ سوال یہ ہو سکتا ہے که آخر یہاں ایسا کیا ہو گیا؟ دراصل,ترقی تب شروع ہوتی ہے جب لوگوں کی سوچ بدلتی ہے اور اس گاؤں کے لوگوں نے اپنی سوچ کو بدل دیا ہے۔....

تب بھی شام کے وقت لالٹین کی روشنی میں لگتی تھی ککشا

Posted On July - 30 - 2017 Comments Off onتب بھی شام کے وقت لالٹین کی روشنی میں لگتی تھی ککشا
پڑھناپڑھانا تب دینک جیون کا ہی حصہ تھا۔ دراصل,ہماری ویدک شکشا پرنالی کے انوسار جیون کے پرتھم چرن میں پرتیک بچے کے لئے گیان,سمجھ اور جیوکا کمانے کے لئے شکشا ضروری ہے۔ تب ایسی ضرورت کو آپ خود سے کیسے الگ دیکھ سکتے ہو۔....

سینٹری نیپکن ضروری ہے تو سستا کیوں نہیں مما!

Posted On July - 30 - 2017 Comments Off onسینٹری نیپکن ضروری ہے تو سستا کیوں نہیں مما!
ورشیہ شیام سندر بیڈیکر گجرات کے وڈودرا شہر میں رہتے ہیں۔ پیشے سے ٹیکسٹائل ڈائی اور کیمیکل ٹریڈر بیڈیکر کی آج کل ایک اور پہچان قائم ہو گئی ہے۔ وہ آوشکارک بھی بن گئے ہیں اور انکا آوشکار یہ ہے که مہلاؤں کے سینٹری نیپکنس جہاں کچھ ملٹی نیشنل کمپنیاں بیحد(جیئیسٹی کے باوجود)اونچے دام پر بیچ رہی ہیں وہیں انہوں نے محض2.50روپے پرتی پیڈ....

گھونگھٹ پہلے ضرورت تھی پر اب یہ اتنا ضروری نہیں

Posted On July - 16 - 2017 Comments Off onگھونگھٹ پہلے ضرورت تھی پر اب یہ اتنا ضروری نہیں
اتر پردیش,ہریانہ اور راجستھان میں گھونگھٹ کی پرتھا صدیوں سے قائم ہے۔ آج جب دیش نے ہر شیتر میں ترقی کر لی ہے تب بھی گاؤں دیہات اور شہروں میں بھی مہلاؤں کو گھونگھٹ نکال کر پرشوں کے سمکش کھڑے ہوتے دیکھا جاتا ہے۔ یہ پرتھا اب سماج کے ساتھ تال میل نہیں کھاتی۔....

یہاں بچے پڑھتے ہی نہیں,گھر چلانا بھی سیکھتے ہیں

Posted On July - 16 - 2017 Comments Off onیہاں بچے پڑھتے ہی نہیں,گھر چلانا بھی سیکھتے ہیں
2015میں سکول ڈراپاؤٹ بچوں پر آدھارت ایک ریسرچ پیپر لکھتے ہوئے مجھے معلوم ہوا که دیش میں14سال سے کم عمر کے بچوں کو نی:شلک اور لازمی شکشا کے ادھیکار کے باوجود پنجاب میں28فیصدی بچے سکول چھوڑ دیتے ہیں۔....

اب کہاں دکھتے ہیں بھایئوں کے سر پر کوتھلی کے پیپے

Posted On July - 2 - 2017 Comments Off onاب کہاں دکھتے ہیں بھایئوں کے سر پر کوتھلی کے پیپے
اب ہم لوگوں کی زندگی میٹرو کی سپیڈ سے دوڑ رہی ہے,چاہے کوئی کسی بھی ورگ اور پیشے سے جڑا ہو,بس اسکے سامنے ایک ہی لکشیہ ہے بھاگ لو۔ اب تو تیج تیوہار بھی اس طرح منائے جانے لگے ہیں,جیسے که لوگ ریلوے اسٹیشن پر کھڑے ہوکر کچھ دیر سستانے لگتے ہیں,کیونکہ اسکے بعد پھر آگے کا سفر شروع ہو جاتا ہے۔ کیتھل میں ساماجک سنستھا کمیونٹی لائجننگ گروپ کے پردھان رولدو رام یہ بات کہتے ہیں۔ بولے اب ساون 

ہم نے دھرنا نہیں دیا,خود جٹ گئے بچوں کو پڑھانے

Posted On July - 2 - 2017 Comments Off onہم نے دھرنا نہیں دیا,خود جٹ گئے بچوں کو پڑھانے
ریواڑی کے گاؤں رولیاواس کی یہ کہانی ان گانوایں کے لئے اداہرن ہے,جہاں سکول کے اندر ٹیچرس کی کمی ہونے پر سکول کے باہر تالے لٹکا دیئے جاتے ہیں یا پھر دھرنا پردرشن ہونے لگتا ہے۔ اس گاؤں میں آٹھویں تک کا سکول ہے اور یہاں بھی ایسے ہی حالات ہیں۔ ٹیچر نہیں ہیں اور باقی سنسادھنوں کی بھی کمی ہے۔ لیکن ایک دن گرامینوں نے آپس میں صلاح کرکے جو نرنیہ لیا اسنے پورے حالات بدل دیئے۔ اب گاؤں کے بچوں کو 

تب گرام پنچائت کا فیصلہ پتھر کی لکیر ہوتا تھا

Posted On June - 18 - 2017 Comments Off onتب گرام پنچائت کا فیصلہ پتھر کی لکیر ہوتا تھا
سماج میں پنچایتوں کی بھومکا سارتھک رہی ہے,حالانکہ سمیہ کے ساتھ انکے فیصلوں پر سوال اٹھتے گئے اور اب حالت یہ ہے که پنچایتوں کی اہمیت کھو گئی ہے۔ روہتک کے نواسی ساہتیہ کار مدھکانت اس دور کو یاد کر رہے ہیں جب پنچائت جو کہہ دیتی تھی وہ لگ بھگ پتھر کی لکیر بن جاتا تھا۔....

یہ مہلا سرپنچ سچ میں لے آئی ہیں اچھے دن

Posted On June - 18 - 2017 Comments Off onیہ مہلا سرپنچ سچ میں لے آئی ہیں اچھے دن
بلجیت کور کو اسکا احساس بہت شروع سے تھا که اسکے سماج کے ساتھ ٹھیک نہیں ہو رہا ہے۔ ایک دلت ہونے کا درد اسے سالتا تھا,کیونکہ گاؤں میں اونچی جاتی کے لوگ انکے سماج کا شوشن کر رہے تھے۔ اسنے ٹھان لیا تھا که کچھ کرنا ہے۔12ویں پاس کرنے کے بعد اسنے بتا بھی دیا که کیا ٹھانا تھا۔....

تب مٹکے کا پانی پیکر جو ٹھنڈک ملتی وہ لاجواب ہوتی

Posted On June - 4 - 2017 Comments Off onتب مٹکے کا پانی پیکر جو ٹھنڈک ملتی وہ لاجواب ہوتی
گرمیوں کا موسم بچوں بڑوں کے لئے یادگار ہوتا ہے,اس موسم میں جہاں تربوز,کھربوجے,عام کھانے کو ملتے ہیں وہیں ندی,تالاب آدی میں جی بھر کر نہانے کا موقع بھی ملتا ہے۔ پہلے بھی اتنی ہی تیکھی گرمی پڑتی تھی لیکن تب لوگ اسے سہ لیتے تھے,لیکن اب تو یہ اسپتال پہنچا دیتی ہے۔....

اکیلے آدمی نے اگا دیا1360ایکڑ میں جنگل

Posted On June - 4 - 2017 Comments Off onاکیلے آدمی نے اگا دیا1360ایکڑ میں جنگل
وہ سال1978کی گرمیاں تھی۔ سورج جی کھول کر تپ رہا تھا۔ آسام میں برہمپتر ندی کے کنارے ارنا ساپوری نامک اس دیپ پر عجیب حالات بن گئے تھے۔ جیو جنتو مرنے لگے تھے اور پکشیوں نے اپنا ٹھکانہ کہیں اور تلاش لیا تھا۔ دور دور تک کوئی پیڑ یا پودھا نظر نہیں آتا تھا۔ اسی دوران جادو پییینگ نامک ایک کشور نے جورہاٹ کے سکول....
Page 1 of 2512345678910...Last »

سماچار میں حال لوکپریہ

Powered by : Mediology Software Pvt Ltd.
Web Tranliteration/Translation