Loading...
Delhi News In Hindi : Despite the revised Budget of the Delhi govt, spend only Rs 46,247 crore |دہلی سرکار کا بجٹ سنشودھت کئے جانے کے باوجود46,247کروڑ رپئے ہی کر پائے خرچ- Dainik Bhaskar

چنوتی/ دہلی سرکار کا بجٹ سنشودھت کئے جانے کے باوجود46,247کروڑ رپئے ہی کر پائے خرچ



Despite the revised Budget of the Delhi govt, spend only Rs 46,247 crore
X
Despite the revised Budget of the Delhi govt, spend only Rs 46,247 crore

  • 8مارچ کو لاگو ہوئی تھی آچار سنہتا, پچھلے وت ورش کے بجٹ سے46ہزار کروڑ خرچ ہوئے
  • دسمبر میں وس چناؤ کی آچار سنہتا لاگو ہو جائیگی, 60ہزار کروڑ کا ہے اس بار کا بجٹ
  • دہلی سرکار کے لئے60ہزار کروڑ رپئے میں سے50ہزار کروڑ رپئے خرچ کر پانا بھی آسان نہیں ہے
  • چالو وت ورش میں دہلی سرکار کے پاس کام کے لئے6-7مہینے ہی بچے 

Dainik Bhaskar

May 21, 2019, 04:17 AM IST

نئی دہلی. دہلی سرکار لوک سبھا چناؤ کے دوران لگائی گئی لمبی اودھی کی آچار سنہتا کے بیچ وت ورش2018-19کے بجٹ کے سنشودھت انومان سے بھی4000کروڑ رپئے کم خرچ کر سکی ہے۔ آچار سنہتا,اس وت ورش کے انتم مہینے مارچ میں10تاریخ کو لاگو ہو گئی تھی۔ اس کارن53ہزار کروڑ رپئے کے میگا بجٹ میں سے دہلی سرکار کیول46,247کروڑ رپئے ہی خرچ کر پائی۔

 

اب چالو وت ورش2019-20کا بجٹ سرکار نے60ہزار کروڑ رپئے کا رکھا ہے۔ اسکے شروعاتی دو مہینے اپریل اور مئی میں آچار سنہتا(30مئی تک)لاگو ہے۔ اسکے بعد کیندر میں سرکار کا گٹھن ہوگا اور پھر دسمبر, 2019میں وس چناؤ کی ادھسوچنا ہو جائیگی۔ مطلب ورتمان سرکار کے پاس میگا بجٹ میں سکیم و پروجیکٹ پر کام کرنے کے لئے مولروپ سے جون سے نومبر یا دسمبر تک6-7مہینے ہی بچتے ہیں۔ ایسے میں دہلی سرکار و کچھ انیہ کیندر شاست پردیشوں کے پرشاسن سے جڑے ادھیکاری بتاتے ہیں که عام آدمی پارٹی سرکار کے لئے60ہزار کروڑ رپئے میں سے50ہزار کروڑ رپئے خرچ کر پانا بھی آسان نہیں ہے۔

قریب ڈھائی مہینے سے لمبت ٹینڈر30مئی کو آچار سنہتا ختم ہونے کے بعد کئے جا ئینگے جاری

  1. شراب کی بکری اور جیئیسٹی نے بھرا کھجانا,واہنوں سے راجسو کم

    دہلی سرکار نے وت ورش2018-19میں راجسو کلیکشن سے42,500رپئے جٹانے کا لکشیہ رکھا تھا لیکن43,103.54کروڑ رپئے کا راجسو سرکار کو ملا ہے۔ وت ورش2017-18میں جیئیسٹی سے13,621کروڑ رپئے کا راجسو ملا تھا جو وتورش2018-19میں19,177.89کروڑ رپئے پہنچ گیا ہے۔ یہ پچھلے سال کے مقابلے5557.06کروڑ رپئے زیادہ ہے۔ پراپرٹی سٹیمپ ڈیوٹی و رجسٹریشن میں پچھلے سال4117کروڑ رپئے کا راجسو آیا تھا جو بڑھکر4458کروڑ رپئے ہو گیا ہے۔ شراب بکری سے ملنے والا راجسو بھی4453کروڑ سے بڑھکر5028کروڑ رپئے پہنچ گیا ہے۔ لیکن واہنوں سے ملنے والے راجسو میں وردھی کی بجائے61کروڑ رپئے کی گراوٹ آئی ہے۔ پچھلے سال2116کروڑ رپئے کا راجسو ملا تھا جو2018-18میں گھٹ کر2055کروڑ رپئے رہ گیا ہے۔

  2. بجٹ میں گھوشت ان کام کو زیادہ ٹائم چاہئیے

    4000بسوں کی خرید,میٹرو اور آرآرٹیئیس وواد,سڑک نرمان پر1900کروڑ رو.,گاؤں کے لئے749کروڑ کے پروجیکٹ, 2چرن میں بارڈر کے12گیٹ کا سوندرییکارن,باڑھ پانی کے لئے1000ایکڑ میں جلاشیہ و موہلہ کلینک کی سنکھیا1000تک پہنچانا۔ دہلی سرکار کے وت وبھاگ سے جڑے ایک اپ سچو نے بھاسکر سے بتایا آچار سنہتا سماپت ہونے کے بعد ٹینڈر کھلتے ہی2ماہ کے لمبت کام کے ورق آرڈر کئے جا سکیں گے یا نئے کام کے ٹینڈر ہو نگے۔

  3. یہ کام جلد ہو سکیں گے

    سی ایم چھاترورتی,پرتبھا فیلوشپ,ودھایک ندھی خرچ,سبسڈی,ایڈووکیٹ ویلفیئر فنڈ میں50کروڑ,لاڈلی یوجنا کی طرظ پر دویانگوں کی یوجنا,دہلی کلا کیندر و یووا مہوتسو,سکولوں میں ٹیچر رکھنے کا فنڈ خرچ کرنے میں مشقت نہیں کرنی پڑیگی۔ وہیں ودھایک ندھی کے800کروڑ رپئے چناوی سال میں سیدھے ووٹر کے پاس پہنچنے کا سادھن بنےگا۔

  4. آر.چندرموہن,لکشیدویپ کے پورو مکھیہ سچو و دہلی سرکار کے پورو شہری وکاس سچو

    "کسی بھی سرکاری پروجیکٹ کو وییہ وت سمتی,کیبنیٹ منظوری,ٹینڈر اور پھر زمین پر کام اتارنے میں ٹائم لگتا ہے۔ آچار سنہتا میں پروجیکٹ سے سمبندھت کام رک جاتے ہیں۔60کروڑ رپئے کا بجٹ7مہینے ملنے پر خرچ کر پانا مشکل ہے۔ ودھایک ندھی راشی خرچ کا اثر تو سیدھے طور پر ووٹر پر دکھتا ہے۔"
     

COMMENT
Web Tranliteration/Translation