Loading...
Bahujan Samaj Party Chief Mayawati and Samajwadi Party Chief Akhilesh Yadav to address a joint press briefing in Lucknow |اکھلیش مایہ کی پہلی سنیکت پریس کانپھرینس آج,اجیت سنگھ بولے سیٹیں ابھی تے نہیں- Dainik Bhaskar
  • Hindi News
  • National
  • Bahujan Samaj Party Chief Mayawati and Samajwadi Party Chief Akhilesh Yadav to address a joint press briefing in Lucknow
--Advertisement--

اپر/اکھلیش مایہ کی پہلی سنیکت پریس کانپھرینس آج,اجیت سنگھ بولے سیٹیں ابھی تے نہیں

Dainik Bhaskar

Jan 12, 2019, 12:05 AM IST


Bahujan Samaj Party Chief Mayawati and Samajwadi Party Chief Akhilesh Yadav to address a joint press briefing in Lucknow
Bahujan Samaj Party Chief Mayawati and Samajwadi Party Chief Akhilesh Yadav to address a joint press briefing in Lucknow
X
Bahujan Samaj Party Chief Mayawati and Samajwadi Party Chief Akhilesh Yadav to address a joint press briefing in Lucknow
Bahujan Samaj Party Chief Mayawati and Samajwadi Party Chief Akhilesh Yadav to address a joint press briefing in Lucknow

  • اترپردیش میں لوک سبھا کی80سیٹیں,سپہ اور بسپا37-37سیٹوں پر چناؤ لڑ سکتی ہیں
  • پچھلے شکروار کو اکھلیش اور مایاوتی نے دہلی میں ملاقات کی تھی

لکھنؤ. لوک سبھا چناؤ2019کو لیکر اترپردیش میں سماجوادی پارٹی اور بہوجن سماج پارٹی کے گٹھ بندھن کا اعلان شنیوار کو ہو سکتا ہے۔ سپہ ادھیکش اکھلیش یادو اور بسپا سپریمو مایاوتی پہلی سنیکت پریس کانپھرینس کرینگے۔ سماجوادی پارٹی نے ٹوٹّر ہینڈل سے اس پریس کانپھرینس کی جانکاری دی۔

 

اس بیچ مہاگٹھبندھن کے ایک اور سہیوگی راشٹریہ لوک دل کے ادھیکش اجیت سنگھ نے کہا, "ہم الاینس کا حصہ ہیں,لیکن سیٹوں کے بٹوارے پر بات چیت نہیں ہوئی ہے۔ کانگریس گٹھ بندھن کے ساتھ رہیگی یا نہیں اس پر فیصلہ اکھلیشجی اور مایاوتیجی کرینگی۔"

 

پریس رلیز دونوں پارٹیوں کی طرف سے جاری

میڈیا کو بھیجے گئے آمنترن پتر میں سپہ کے راشٹریہ سچو راجیندر چودھری اور بسپا کے راشٹریہ مہاسچو ستیش چندر مشرع کے دستخط ہیں۔

تین سیٹیں مل سکتی ہیں رالود کو 
ایسا کہا جا رہا ہے که راجیہ کی لوک سبھا کی80سیٹوں میں سے سپہ اور بسپا37-37سیٹوں پر چناؤ لڑ سکتی ہیں۔ تین سیٹیں رالود کو ملینگی۔2سیٹیں کانگریس کو دی جا سکتی ہیں۔ ایک سیٹ انیہ سہیوگی کے لئے رکھی ہے۔ سیٹوں کے بٹوارے میں پینچ رالود کی وجہ سے پھنس گیا ہے۔ پارٹی پرمکھ اجیت سنگھ چار سیٹیں چاہتے ہیں۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق,پچھلے شکروار کو اکھلیش اور مایاوتی کے بیچ دہلی میں بیٹھک ہوئی تھی۔ اس میں یہ بات بھی نکل کر آئی تھی که دونوں کانگریس کے ساتھ چناؤ لڑنے کے پکش میں نہیں ہے۔

 

2018میں بھاجپا کو سپہ بسپا سے ہوا نقصان
گورکھپور اور پھولپر لوک سبھا سیٹ پر ہوئے اپ چناؤٔ میں بسپا نے سپہ امیدوار کو ووٹ دینے کی اپیل کی تھی۔ وہیں,کی رانا لوک سبھا اپ چناؤٔ میں رالود امیدوار کو سپہ بسپا اور کانگریس نے سمرتھن دیا۔ تینوں جگہوں پر بھاجپا کو ہار ملی۔

 

اترپردیش:2014کے لوک سبھا چناؤ کی ستھتی

کل سیٹیں:80 

 

پارٹی سیٹیں ووٹ شیئر
بھاجپا+ 73 42.6%
سپہ 05 22.3%
بسپا 00 19.8%
کانگریس 02 7.5%

 

پہلے بھی ساتھ آئے تھے بسپا سپہ
ملایم سنگھ یادو نے1992میں سماجوادی پارٹی کا گٹھن کیا۔1993میں ہوئے ودھان سبھا چناؤ میں سپہ بسپا کا گٹھ بندھن ہوا۔ اس سمیہ بسپا کی کمان کانشیرام کے پاس تھی۔ سپہ256اور بسپا164ودھانبھا سیٹوں پر چناؤ لڑی۔ سپہ کو109اور بسپا کو67سیٹیں ملیں۔ لیکن1995میں سپہ بسپا کے رشتے خراب ہو گئے۔ اسی سمیہ2جون1995کو گیسٹ ہاؤس کانڈ کے بعد گٹھ بندھن ٹوٹ گیا۔ 

 

کیا ہے گیسٹ ہاؤس کانڈ؟
کہا جاتا ہے که1993میں ملایم سنگھ کے مکھیہ منتری بننے کے بعد بسپا اور بھاجپا کے بیچ نزدیکیاں بڑھنے لگی تھیں۔ سپہ کو اسکا اندیشہ ہو گیا تھا که بسپا کبھی بھی سرکار سے سمرتھن واپس لے سکتی ہے۔2جون1995کو مایاوتی اپنے ودھائکوں کے ساتھ سٹیٹ گیسٹ ہاؤس میں بیٹھک کر رہی تھیں۔ اسکی جانکاری جب سپہ کے لوگوں کو ہوئی تو اسکے کئی سمرتھک وہاں پہنچ گئے۔ سپہ سمرتھکوں نے وہاں جم کر ہنگامہ کیا۔ بسپا ودھائکوں سے مارپیٹ تک کی گئی۔ مایاوتی نے اس پورے ڈرامے کو اپنی ہتیا کی سازش بتایا اور ملایم سنگھ سرکار سے سمرتھن واپس لے لیا۔ ملایم سرکار کے الپمت میں آتے ہی بھاجپا نے بسپا کو سمرتھن دینے کا پتر راجیہ پال کو سونپ دیا۔ اگلے ہی دن مایاوتی راجیہ کی پہلی دلت مکھیہ منتری بن گئیں۔

Astrology

Recommended

Click to listen..
Web Tranliteration/Translation