Loading...
بجلی سے چلینگی بھارت کی سرکاری کاریں| Webdunia Hindi

بجلی سے چلینگی بھارت کی سرکاری کاریں

بھارت سرکار کےنے اپنے قافلے میں15 شامل کئے ہیں۔ انکی مدد سے وایو پردوشن اور کاربن اتسرجن میں کمی آئیگی۔ ساتھ ہی ہر سال36,000لیٹر ایندھن کی بچت بھی ہو سکیگی۔

وت منترالیہ کی اس پہل کے علاوہ انیہ کیندر اور راجیہ سرکار کے وبھاگوں کی اس پرکار کے پہل کا لکشیہ5,00,000سرکاری واہنوں کو پارمپرک واہن سے الیکٹرک واہنوں میں بدلنا ہے۔ وت منترالیہ ادھیکاریوں نے بتایا,مہندرا ویرٹو کے15الیکٹرک واہن40,000رپئے ماسک کے پٹے پر لئے گئے ہیں,جو آرتھک معاملوں کے منترالیہ(ڈیئیے)کے سنیکت سچو اور ورشٹھ ادھیکاریوں کے دوارہ استعمال کئے جا ئینگے۔ اس سے سالانہ36,000لیٹر ایندھن کی بچت ہوگی۔

ان واہنوں کو چارج کرنے کے لئے نارتھ بلاک میں28چار جگ پوائنٹ ستھاپت کئے گئے ہیں۔6گھنٹے میں چارج کرنے والے24دھیمی چار جنگ کیندر اور صرف90منٹ میں چارج کرنے والے4تیور چار جنگ کیندر ان چار جنگ پوائنٹس میں شامل ہیں۔

1881میں گستاو ٹروو اپنی تپہیا الیکٹرک گاڑی پر سوار ہوئے۔ اسے ٹروو ٹرسائکل کہا گیا۔ پیرس کی سڑکوں پر یہ گاڑی12کمی پرتی گھنٹہ کی رفتار سے چل سکتی تھی۔ ایک بار چارج کرنے پر گستاو کی الیکٹرک سائیکل12سے26کلومیٹر کی یاترا کرتی تھی۔ گستاو نے سائیکل کے ایک سیل میں سیمینس کی موٹر لگائی تھی اور بیٹری ڈرائیور کے پیچھے رکھی۔

ڈیئیے نے اپنے ادھیکاریوں کے لئے15الیکٹرک واہنوں کا اپیوگ کرنے کے ادیشیہ سے ودیت منترالیہ کے ادھینستھ نکائے اینرجی ایپھسئینسی سروسز لمٹیڈ(ایئییسئیل)کے ساتھ ایک سمجھوتے پر ہستاکشر کئے۔

وت منترالیہ نے بیان میں کہا,پانچ ورشوں کی اودھی کے لئے پٹے یا لیج پر لئے گئے ان15واہنوں کا اپیوگ کرنے سے آرتھک معاملوں کے وبھاگ کو پرتیورش36,000لیٹر سے بھی ادھک ایندھن کی بچت ہونے کی آشا ہے۔ اسکے علاوہ,اس سے پرتیورش کاربن ڈایآکسائڈ کے اتسرجن میں لگ بھگ440ٹن کی کمی بھی سمبھو ہو پائیگی۔

بھارت ہر سال کچے تیل کے آیات پر7لاکھ کروڑ ڈالر خرچ کرتا ہے اور اسکے استعمال سے پردوشن بھی بڑھتا ہے۔ ساتھ ہی یہ ستھانیہ ارتھویوستھا کے لئے بڑی سمسیا ہے۔ ایموبلٹی اپنانے سے پروہن شیتر سے گرین ہاؤس گیسوں کا اتسرجن کم ہوگا تتھا شہروں میں پردوشن کا سطر گھٹیگا۔

-->

اور بھی پڑھیں:


Web Tranliteration/Translation