Loading...
مکر سنکرانتی14جنوری کو ہی کیوں آتی ہے؟ جانئے رہسیہ| Webdunia Hindi

مکر سنکرانتی14جنوری کو ہی کیوں آتی ہے؟ جانئے رہسیہ

ادھیاتم,کھگول و جیوتش کا ولکشن سنگم ہے یہ پرو

-ڈا.آر.سی.اوجھا

سوریہ بھگوان کا مکر راشی میں پرویش ادھیاتم,کھگول وگیان اور جیوتش شاستر کے سطروں پر اتوششٹ پرو مانا جاتا ہے۔ ورش کی انیہ تتھیوں و پرووں میں شائد ہی ایسی تتھی ہوگی جو سبھی سطر پر پوجنیہ ہو۔ تتھیوں کا کشیہ ہو,تتھیاں گھٹ بڑھ جائیں,ادھک ماس کا پوتر مہینہ آ جائے پرنتو مکر سنکرانتی14جنوری کو ہی آتی ہے۔

اسی دن سے سوریدیو کا اتراین میں پرویش مانا جاتا ہے۔ کھگول وگیان کے انوسار اتراین سوریہ کی چھ ماس کی اس اودھی کو کہتے ہیں جسمیں سوریہ کی گتی اتر ارتھات کرک ریکھا کی اور ہوتی ہے۔ یعنی مکر ریکھا سے اتر کی اور سوریہ بھرمن کرتا ہے۔ چھ ماہ بعد دکشناین میں سوریہ کی گتی کرک ریکھا سے دکشن مکر ریکھا کی اور ہوتی ہے۔

سوریہ آدھیاتمک سطر پر آتماکارک,آتمچنتن ایوں آتموناتی کرنے والا گرہ مانا جاتا ہے۔ پورا سورمنڈل سوریہ سے اور جا پراپت کرتا ہے۔ بنا سوریہ سورمنڈل کی کلپنا کرنا اسمبھو ہے۔ سوریہ آروگیہ ایوں چیتناشکتی کے دیوتا ہیں۔ سوریہ ہی آیشمان یوگ دینے میں سمرتھ ہے۔ چندرما کی طرح سوریہ ایک راشی میں سوا دو دن نہیں رہتے۔وہ پرتیک نکشتر میں لگ بھگ14دن سے تھوڑے سے کم سمیہ کے لئے بھرمن کرتے ہیں۔

جیوتش شاستر کے انوسار مکر راشی میں جب سوریہ کا اتراشاڑھا نکشتر میں پرویش ہوتا ہے,ان دنوں جو سوریہ کی اور جا نکلتی ہے,وہ ادھیاتم سے اپیکشاکرت ادھک سرابور رہتی ہے۔ اتراشاڑھا جیوتش کے کل27نکشتروں میں سے اکیسواں نکشتر ہے۔ اتراشاڑھا سویں سوریہ کا نکشتر ہے کیونکہ وہ سویں اس نکشتر کے سوامی ہیں۔
انھیں کارنوں سے مکر سنکرانتی کے دن سنان,دھیان,پوجا پاٹھ,دیو سمرن,منتروچارن,منتر سدھی کا مہتو بتایا گیا ہے۔ منتروچارن کے ساتھ پوتر ندیوں اور سرووروں میں سنان کو وشیش پاون مانا گیا ہے۔ آج سے نہیں,کم سے کم مہابھارت کال سے تو نشچت روپ سے کہا جا سکتا ہے که اتراین سوریہ کے درشن کو موکشدایی مانا گیا ہے۔

شاستروں اور پرانوں میں پرامانک سندربھ ہیں که شری ہری,بھگوان وشنو سویں ہی سوریہ کا روپ دھارنکر برہمنڈ کو آلوکت کئے ہوئے ہیں۔ مہابھارت کے وششٹ پاتر بھیشم پتامہ شرشیا پر لیٹ کر بھی مرتیو کا ورن کرنے کے لئے سوریہ کے اتراین ہونے کی پرتیکشا کر رہے تھے۔ بھارتیہ سنسکرتی میں اتراین کے سوریہ کے اس سے بڑے مہتو کا اداہرن اور کیا ہو سکتا ہے۔

ویدک رچاؤں اور منتروں کے ستت اچارن سے ہمارا شریرک تنتر جھنکرت ہو اٹھتا ہے اور شنی شنی آدھیاتمک اور جا سنچت ہوتی رہتی ہے جو سدگنوں کے وکاس اور پھیلاو میں کارگر سدھ ہوتی ہے۔ رشی منیوں کے پاس یہی تو اور جا رہتی ہے۔

رام کرشن پرم ہنس نے وویکانند کو کیا دیا تھا؟ کوئی بھوتک وستو نہیں دی تھی۔ اس سنکلت اور جا سے,سپرش ماتر سے پرم ہنس نے وویکانند کو سرابور کر دیا تھا اور ناستک نریندر آستک وویکانند میں پرورتت ہو گئے تھے۔

سوریوپاسنا پراربدھ اور پرشارتھ کا سندر سمنویہ پرستت کرتی ہے۔ بھاگیہ,جسے ہم اندھوشواس کی شرینی میں لیتے ہیں,اصل میں پراربدھ کا ہی پھل ہے۔ پراربدھ بھی کچھ نہیں ہے,پچھلے جنموں کے اچھے برے کرموں کا سنچیہ ہے جو جیواتما کے دھرتی پر بھرمن کے دوران کایا دھارن کرتے سمیہ سامنے آ جاتا ہے۔

سوریہ اپاسک پراربدھ کاٹتا ہے اور جب جیو پرماتما کی سوروپ شکتی کا ساکشاتکار کر لیتا ہے تب سبھی قرم و اسکے پھل سماپت ہو جاتے ہیں اور اچ لوکگمن کا مارگ پرشست ہو جاتا ہے۔

منتروں کے اچارن کی شدھتا سے شکتی پیدا ہوتی ہے,اسے اب وگیانک بھی ماننے لگے ہیں۔ تلسی داس جی نے بھی کہا ہے که'رام اترکیہ بدھی,من,بانی'۔ ترک جڑ ہے اسلئے اسکے ذریعے چیتنیہ کا چنتن اسمبھو ہے۔

اسلئے سوریہ کا مکر راشی اور وشیش روپ سے اتراشاڑھا نکشتر میں بھرمن پنیوں کی راشی کو پردان کرنے والا ہے۔ آتمشدھی کے لئے یہ سمیہ انوشنست کیا گیا ہے۔

کوئی آشچریہ نہیں که مکر سنکرانتی کو سنان کے لئے گنگا اور گنگا ساگر میں جن آستھا کا سیلاب امڑ پڑتا ہے۔ وشو چکت ہے اس آستھا کے پرو سے۔ اس پرو میں ادھیاتم,کھگول وگیان اور جیوتش شاستر تینوں کی ہی وشیشتائیں سماوشٹ ہیں,اسلئے یہ پرووں کا پرو کہا جا سکتا ہے۔

-->

اور بھی پڑھیں:


Web Tranliteration/Translation