Loading...
بھاجپا ادھیکش امت شاہ کی ہنکار, 2019میں بنیگی مودی سرکار| Webdunia Hindi

بھاجپا ادھیکش امت شاہ کی ہنکار, 2019میں بنیگی مودی سرکار

Last Updated: شنیوار, 12جنوری2019 (00:06 IST)
نئی دہلی۔ وپکشی دلوں کے گٹھ بندھن کی پہل کو ڈھکوسلا قرار دیتے ہوئےنے کہا که بھاجپا غریبوں کے کلیان اور سانسکرتک راشٹرواد کو آگے بڑھا رہی ہے جبکہ وپکشی دل کیول ستا کے لئے ساتھ آ رہے ہیں۔

بھاجپا کی راشٹریہ پریشد کی بیٹھک کو سمبودھت کرتے ہوئے شاہ نے کہا که2019کا چناؤ ویچارک یدھ کا چناؤ ہے۔2وچاردھارائیں آمنے سامنے کھڑی ہیں۔2019کا یدھ صدیوں تک اثر چھوڑنے والا ہے اور اسلئے میں مانتا ہوں که اسے جیتنا بہت مہتوپورن ہے۔

انہوں نے کہا که2019کا چناؤ بھارت کے غریب کے لئے بہت معنی رکھتا ہے۔ سٹارٹئپ کو لیکر نکلے یوواؤں کے لئے یہ چناؤ معنی رکھتا ہے۔ کروڑوں بھارتیہ,جو دنیا میں بھارت کا گورو دیکھنا چاہتے ہیں,انکے لئے یہ چناؤ معنی رکھتا ہے۔ وپکش کے مہاگٹھبندھن کو ڈھکوسلا قرار دیتے ہوئے انہوں نے کہا که ایک دوسرے کا منھ نہ دیکھنے والے آج ہار کے ڈر سے ایک ساتھ آ گئے ہیں,کیونکہ وہ جانتے ہیں که اکیلے نریندر مودیجی کو ہرانا ممکن نہیں ہے۔
شاہ نے کہا که2014کے چناؤ میں ہم ان دلوں کو پراجت کر چکے ہیں اور آگے بھی انھیں پراجت کرینگے۔ اترپردیش میں بھاجپا کی سیٹیں73سے بڑھکر74ہونگی,یہ72نہیں ہونگی۔ انہوں نے دعویٰ کیا که2019میں بھاجپا کے نیترتو میں راجگ کی سرکار بنیگی۔2014میں6راجیوں میں بھارتیہ جنتا پارٹی کی سرکاریں تھیں اور2019میں16راجیوں میں بھاجپا کی سرکاریں ہیں۔5سال کے اندر بھاجپا کا گورو دن دوگنی گتی سے بڑھا ہے۔
امت شاہ نے کہا که یہ ادھویشن بھارتیہ جنتا پارٹی کے دیش بھر میں پھیلے کاریہ کرتاؤں کے لئے سنکلپ کرنے کا ادھویشن ہے۔ بھاجپا کاریہ کرتا اجے یودھا مودی کے نیترتو میں چناؤ میں جا رہے ہیں,ایسے میں کاریہ کرتاؤں کو جوش میں بڑھنا چاہئیے لیکن ہوش نہیں کھونا چاہئیے۔ بھاجپا چاہتی ہے که جلد سے جلد اسی ستھان پر بھویہ رام مندر کا نرمان ہو اور اس میں کوئی دو دھا نہیں ہے۔

انہوں نے کہا که ہم پریاس کر رہے ہیں که سپریم کورٹ میں چل رہے کیس کی جلد سے جلد سنوائی ہو لیکناس میں بھی روڑے اٹکانے کا کام کر رہی ہے۔ کانگریس اپنا رخ سپشٹ کرے۔ بھاجپا کاریہ کرتا آشوست رہے که سنودھان کے تحت رام مندر کے نرمان کے لئے پارٹی کٹبدھ ہے۔
راہل گاندھی پر نشانہ سادھتے ہوئے انہوں نے کہا که کچھ سمیہ سے جو سویں ضمانت پر ہیں,جن پر انکم ٹیکس کا600کروڑ رپئے بقایا ہو,ایسے لوگ مودیجی پر بھرشٹاچار کا آروپ لگا رہے ہیں۔ جنتا کی سوجھ بوجھ بہت زیادہ ہے۔ مودیجی کا پرامانک جیون اور نشکلنک چرتر جنتا کے سامنے ہے۔

شاہ نے کہا که ایک زمانا تھا,جب دیش میں کانگریس بنام انیہ ہوا کرتا تھا,آج مودی بنام انیہ سبھی ہو گیا ہے۔ جس بھارت کی کلپنا وویکانندجی نے کی تھی,اس بھارت کو ہم مودیجی کے نیترتو میں بنانے کا پورا پریاس کر رہے ہیں۔ اٹلجی جن سنگھ کے سمیہ سے ہی دیش کی راجنیتی کے دھرو تارے کی طرح چمکے تھے,بھاجپا کے سنستھاپک ادھیکش تھے۔ دیش کے ہر کونے میں بھاجپا کو پہنچانے کے لئے اٹلجی اور آڈوانیجی کی جوڑی نے جو سنگھرش کیا ہے,ایسا سنگھرش شائد ہی ہوا ہو۔


اور بھی پڑھیں:


Web Tranliteration/Translation