Loading...
ہندی بھاشا پر کوتا:بھاشا کی آزادی| Webdunia Hindi

ہندی بھاشا پر کوتا:بھاشا کی آزادی


چندریش پرکاش(بوسٹن,یو ایس اے)

ہم آزاد بھارت کے باشندے ہیں
انگریزوں کو گئے کئی دشک بیت گئے
پر انگریزی اب بھی جندا ہے
ہندی و انیہ ستھانیہ بھاشاؤں پر
راج اسکا اب بھی قائم ہے۔
ہندی شاسکیہ بھاشا ہے
ستھانیہ بھاشائیں بھی دھڑلے سے استعمال ہو رہیں
لوک سبھا میں ستھانیہ بھاشا استعمال پر روک نہیں
تمل بولتے سانسد
بھارتیہ لوکتنتر کی مضبوطی کا سنکیت ہے۔

پھر کمپیوٹر پر اپنی بھاشا میں لکھنا
اتنا مشکل کیوں ہے؟
اس کمپیوٹر کے یگ میں
کیا یہ ہمارے ساتھ انیائے نہیں؟
کیوں ہم اس پر کچھ بولتے نہیں؟
کیوں اس پر کوئی کچھ لکھتا نہیں؟
کون کریگا نیائے؟
کب ختم ہوگا یہ انیائے؟
کیونکہ نیایہ پالکا پر شاسن اب بھی انگریزی کا ہے
انیہ کسی بھاشا کے استعمال پر یہاں
سخت چیتاونی ملتی ہے۔

یہ ابھویکتی کی کیسی آزادی ہے؟
اپنی بھاشا میں بولنے کو سوتنتر سانسد,
کیوں اس پر کچھ بولتے نہیں؟
کیوں اس انیائے کو روکنے والا
سشکت قانون لاتے نہیں؟
ایسے میں اپنی بولی بولنا
صرف ایک دکھاوا ہے۔

گنگا جمنا سرسوتی
کاویرینرمدابرہ
انکو ہم پوجتے ہیں
ہماری سنسکرتی ہماری بھاشاؤں سے ہے,
پھر ہماری بھاشائیں یوں اپیکشت کیوں ہیں؟
کیوں نیایہ پالکا میں انکے استعمال پر پابندی ہے؟
وبھن راجیوں و کیندرشاست پردیشوں میں
ستھانیہ بھاشا میں ابھویکتی کی آزادی ہے۔

ہر پردیش میں ستھانیہ بھاشا کو
پروتساہن و پراتھمکتا ہے
گھروں میں,محلوں میں
دوستوں اور رشتیداروں میں
ریتی رواجوں اور تیوہاروں میں
شادیوں اور پارٹیوں میں
ہماری بولی ہماری پہچان ہے۔
ہماری پہلی پسند ہے
ہماری سنسکرتی کی نینو اس سے ہے
ایسے میں کیوں نیایہ پالکا کے دروازوں پر
یہ سوتنترتا ہم سے چھین لی جاتی ہے؟

یہ کیسا نیائے ہے,جہاں ابھویکتی کی سوتنترتا نہیں؟
کیوں قانون کے گلیاروں میں
ستھانیہ بھاشا کا ودوان بھی
انگریزی پر نربھر ہے؟
کیوں آزاد بھارت میں نیائے
انگریزی پر نربھر ہے؟

کیوں سنسد بھون کی بھانتی
یہاں بھی اپنی بھاشا بولنے کو ہم سوتنتر نہیں؟
کیوں اب بھی ہمارا قانون
انگریزی کے ادھین ہے؟
جیلوں میں بند ستر فیصدی لوگ
انپڑھ یا دسویں پاس ہیں
کیا ان میں سے کئی کا اپرادھ
انگریزی نہ آنا تھا؟

آزادی کے ستر ورشوں بعد بھی
ان لوگوں کی آزادی
انگریزی پر نربھر ہے۔

کیوں ہمارے قانونوں کا انوواد
ہماری بھاشاؤں میں ہوتا نہیں؟
کیا آئینے میں دیکھ
ہمیں شرم محسوس نہیں ہونی چاہئیے؟

ہمارے دیش اور اسکی مٹی
ہماری سنسکرتی ہمارے ریتی رواج
انکا اپمان ہمیں قطعی برداشت نہیں
پھر ہماری بھاشائیں
آج بھی یوں اپمانت کیوں ہیں؟
نیایہ پالکا کی سکریتا نے
کئی بار گیرسنویدھانک فیصلوں اور قانونوں سے
دیش کو بچایا ہے۔

ہماری بھاشاؤں کی سوتنترتا پر بھی
نیایہ پالکا یا سنسد میں
آج فیصلہ کرنا ہوگا
انیتھا جن جن کو
اسکے لئے آواز اٹھانی ہوگی
آزادی کی ایک اور لڑائی لڑنی ہوگی۔

 

اور بھی پڑھیں:


Web Tranliteration/Translation