Loading...
ہاں,میں آج کی ناری ہوں...یہ ہیں میرے11ہتھیار... | Webdunia Hindi

ہاں,میں آج کی ناری ہوں...یہ ہیں میرے11ہتھیار...


آج کی مہلائیں ان11اچھی باتوں کے ساتھ رہتی ہیں کانپھڈینٹ

آدھونک مہلاؤں کے11خاص گن

سماج میں وقت کے ساتھ مہلاؤں کا جیون کے پرتی نظریہ بدلہ ہے۔ انکی شکشا,پرورش,رہن صحن آدی سبھی کچھ بدلہ ہے...انکی سوچ میں بھی کافی سکاراتمک بدلاؤ ہوئے ہیں۔ اب وہ کیول دوسروں کے لئے ہی نہیں,بلکہ اپنے لئے بھی جیتی ہیں۔ وہ اپنے پرتی پہلے سے کافی ادار ہوئی ہیں۔ کئی ماینوں میں اب انہیں سوتنترتا ملی ہے جسے آدھونک مہلاؤں کے ان خاص گنوں سے سمجھا جا سکتا ہے۔

ابھویکتی:آج کی مہلا اپنے وچاروں کو کھل کر دوسروں کے سامنے رکھتی ہیں۔ اسے کسی کی کوئی بات پسند آئے,تو تعریف کرنے میں بھی جھجھک نہیں کرتیں,وہیں کوئی بات ناپسند ہو تب بھی من میں دباکر نہیں بیٹھتیں۔

ششٹتا:آج مہلائیں شکشت ہیں۔ انہیں کئی وشیوں کا گیان ہے۔ وہ آدھنکتا,سبھیتا اور ششٹتا میں تال میل بٹھاکر چلتی ہیں۔ آبھار ویکت کرنا اور غلطی ہونے پر ترنت اسے سویکار کر معافی مانگنا آدھونک مہلا کی عادت میں شامل ہے۔
ذمیدار:آج مہلا ذمیدار تو ہے ساتھ ہی,کتنی ذمیداری اپنے کندھوں پر لینا ہے,یہ وہ اپنی پراتھمکتا انوسار تے کرتی ہیں۔ جتنا کام وہ اچھی طرح سے نبھا سکیں,اتنا ہی کام وہ ہاتھوں میں لیتی ہیں۔ کیول دوسروں کی خوشی کے لئے ادھک کام کا بوجھ لینے کے لئے ہاں نہیں کرتیں۔

نہ کہنے سے نہیں ڈرتیں:آج مہلائیں جیہجوری نہیں کرتیں۔ جہاں ضروری ہو وہاں نہ کہنے میں بھی نہیں ہچکتیں۔
کام بانٹنا جانتی ہیں:آدھونک مہلائیں ہوائی باتوں کو نہیں مانتیں۔ انہیں پتہ ہے که وہ سپروومین نہیں ہیں,انسان ہیں۔ گھر,باہر,بچوں اور پریوار کے سارے کام وہ اکیلے نہیں کر سکتیں۔ ان کاموں کو وہ اپنے پتی اور انیہ سدسیوں کے ساتھ بانٹنا بہتر سمجھتی ہیں۔

اپنا خیال رکھتی ہیں:آدھونک مہلائیں خود سے پیار کرتی ہیں,پریوار کے ساتھ خود کا بھی خیال رکھتی ہیں اور خود کا بھی سمان کرتی ہیں۔
اپ ڈیٹ رہتی ہیں:یہ مہلائیں نئی نئی چیزیں و ٹیکنولاجی سیکھتی ہیں۔ یہ بھلی بھانتی سمجھتی ہیں که سیکھنے کی کوئی عمر نہیں ہوتی۔ وہ موبائل,سمارٹپھونس,نیٹ بینکنگ,ٹکٹ بکنگ,کمپیوٹر,لیپٹاپ جیسے تمام گیجیٹس کا اپیوگ کرکے اپنے جیون کو آسان بناتی ہیں۔ جیون کا کوئی بھی پڑاو ہو,چاہے وہ شادی ہو یا ماترتو,انہیں نئی چیزیں سیکھ کر آگے بڑھنے سے کوئی نہیں روکتا۔

اپنے لئے سمیہ نکالتی ہیں: آج کی مہلاؤں کا جیون کے پرتی نظریہ الگ ہے۔ اب وہ ہمیشہ پریوار سے گھرے رہنا پسند نہیں کرتیں۔ خود کے لئے سمیہ نکالنا,گھومنا,دوستوں کے ساتھ وقت بتانا,جب من کرے تو سولو ٹریول کرنا,اپنی پسندیدہ گتیودھیوں میں بھاگ لینا آدی انہیں پسند ہے۔
خود پر کنٹرول:آج مہلائیں آفس و اپنے ساماجک سرکل میں کئی طرح کی پارٹیز میں بھاگ لیتی ہیں,جہاں ویج و نانویج کا چلن عام بات ہے۔ ایسے میں وہ سمیہ کے ساتھ چلتے ہوئے اس طرح کے کھانپان سے پرہیز نہیں کرتی ہیں۔ وہ سبھی نئی چیزیں آجمانا پسند کرتی ہیں۔ صحیح غلط کی سمجھ رکھتے ہوئے وہ خود کو نینترن میں رکھنا بھی جانتی ہیں۔

عمر سے پرے سوچتی ہیں:آج کی مہلائیں ہر عمر کا مزہ لیتی ہیں اور اسے اپنی عمر پر فخر بھی ہوتا ہے۔ وہ ہر عمر میں موج مستی بھی کرتی ہیں۔ آج کی مہلائیں سمیہ سے پہلے بوڑھی نہیں ہوتیں و خود کو مینٹین رکھتی ہیں۔ خود کی ضرورتوں پر دل کھول کر خرچ بھی کرتی ہیں۔
غلط کے خلاف آواز اٹھاتی ہیں:آج وہ کسی پرکار کے ظلم چپ چاپ نہیں سہتیں اور نہ ہی دوسروں کو سہنے دیتی ہیں۔ اپنے پرتی غلط ویوہار ہونے پر وہ آواز اٹھاتی ہیں۔ ضرورت ہونے پر وہ اپنے گیرجمیدار پتی کو چھوڑ اکیلے رہنے کا ساہس بھی رکھتی ہیں۔ آج سماج میں اوواہت مہلائیں,ایکل مہلا اور سنگل مدرس بھی سر اٹھاکر رہ رہی ہیں۔

-->

اور بھی پڑھیں:


Web Tranliteration/Translation