Loading...
All about rafale deal in hindi | Rafale Deal:آخر کیا ہے رافیل ڈیل,کیوں ہے اس پر وواد;آسان طریقے سے سمجھیں یہ پورا معاملہ- Dainik Bhaskar
--Advertisement--

Rafale Deal:آخر کیا ہے رافیل ڈیل,کیوں ہے اس پر وواد;آسان طریقے سے سمجھیں یہ پورا معاملہ

راہل گاندھی نے شکروار کو ایک بار پھر رافیل معاملہ اٹھایا اور پردھان منتری مودی کو بھرشٹ تک کہہ دیا۔

Dainik Bhaskar

Oct 11, 2018, 01:22 PM IST
ستمبر2019میں پہلا رافیل بھارت پ� ستمبر2019میں پہلا رافیل بھارت پ�

نئی دہلی. بھارت اور فرانس سرکار کے بیچ ہوئے رافیل لڑاکو ومان سودے پر وواد بڑھتا جا رہا ہے۔راہل گاندھیاور کانگریس مودی سرکار کو گھیرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ راہل نے شکروار11اکتوبر کو ایک بار پھر پریس کانپھرینس کی اور پی ایم پر سیدھے آروپ لگاتے ہوئے انہیں بھرشٹ تک کہہ دیا۔ اسکے پہلے وت منتریارن جیٹلیراہل گاندھی کو ایک انٹرویو کے ذریعے جواب بھی دے چکے ہیں۔ لیکن,وواد تھمتا نظر نہیں آ رہا۔ رہی صحیح کسر فرانس کے پورو راشٹرپتی پھرانسوا اولاند کے ایک کتھت بیان نے پوری کر دی۔ اس میں انہیں یہ کہتے ہوئے بتایا گیا ہے که ریلائنس کا نام بھارت نے پرستاوت کیا تھا۔ دراصل,قرار کی شرطوں کو گوپنی رکھا گیا ہے۔ اسلئے,بھارت اور فرانس دونوں ہی اسکی قیمت بھی نہیں بتا رہے۔ کانگریس اور راہل گاندھی اسی وجہ سے سرکار کو کٹھگھرے میں کھڑا کر رہے ہیں۔ بہرحال,ہم یہاں آپ کو اس ڈیل اور اس سے جڑے کچھ سوالوں کے جواب دے رہے ہیں۔

پرشن: کیا ہے یہ سمجھوتہ سنکشیپ میں؟
-رافیل فائٹر جیٹ ڈیل بھارت اور فرانس کی سرکاروں کے بیچ ستمبر2016میں ہوئی۔ ہماری وایوسینا کو36اتیادھنک لڑاکو ومان ملیں گے۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق,یہ سودا7.8کروڑ یورو(قریب58,000کروڑ رپئے)کا ہے۔ ستمبر2019میں پہلا رافیل بھارت پہنچیگا۔

پرشن: اینڈیئے اور یو پی اے سرکار کے دوران مولیہ میں کتنا فرق؟
-کانگریس کا دعویٰ ہے که یو پی اے سرکار کے دوران ایک رافیل فائٹر جیٹ کی قیمت600کروڑ رپئے تے کی گئی تھی۔ مودی سرکار کے دوران ایک رافیل قریب1600کروڑ رپئے کا پڑےگا۔

پرشن: لیکن,قیمت میں اتنا انتر کیوں؟
-یہی سب سے اہم سوال ہے۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق,یو پی اے سرکار کے دوران صرف ومان خریدنا تے ہوا تھا۔ اسکے سپییر پارٹس,ہینگرس,ٹریننگ سمیلیٹرس,مسائل یا ہتھیار خریدنے کا کوئی پراودھان اس مسودے میں شامل نہیں تھا۔ فائٹر جیٹس کا مینٹین نینس بیحد مہنگا ہوتا ہے۔ اسکے سپییر پارٹس نہ صرف کافی مہنگے بلکہ کئی مہینوں یا سالوں میں مل پاتے ہیں۔ اسکی پرکریا بھی کافی لمبی اور پیچیدہ ہوتی ہے۔ مودی سرکار نے جو ڈیل کی ہے۔ اس میں ان سبھی باتوں کو شامل کیا گیا ہے۔ رافیل کے ساتھ میٹیور اور سکیلپ جیسی دنیا کی سب سے خطرناک مسائلیں بھی ملینگی۔ میٹیور100کلومیٹر تک مار کر سکتی ہے جبکہ سکیلپ300کلومیٹر تک سٹیک نشانہ سادھ سکتی ہے۔ اس میںOBOGSیعنی آن بورڈ آکسیجن رپھیولنگ سسٹم بھی لگا ہے۔ کانگریس کی آپتی ہے که اس ڈیل میں ٹیکنولاجی ٹرانسفر کا پراودھان نہیں ہے۔ پارٹی اس میں ایک کمپنی وشیش کو فائدہ پہنچانے کا آروپ بھی لگاتی ہے۔

پرشن: بھارت کے لئے رافیل میں اور کیا خاص ہوگا؟
-میڈیا رپورٹس کے مطابق,رافیل بنانے والی‘دسالت’کمپنی اسے بھارت کی بھوگولک پرستھتیوں اور اسکی ضرورتوں کے حساب سے ڈیزائن کریگی۔ اسے لیہ لداخ اور سیاچن جیسے درغم علاقوں میں بھی آسانی سے استعمال کیا جا سکےگا۔ اسکے لئے خاص پر جے لگائے جا ئینگے۔ پائلٹ ٹریننگ کے لئے الگ سے سمیلیٹر ملیں گے۔ سمیلیٹر کا ارتھ ٹھیک ویسا ہی ماڈل فائٹر جیٹ ہے جیسا واستو میں رافیل ہوگا۔ اسکے رکھنے کی جگہ اور مینٹین نینس کی ذمیداری بھی فرانس کی ہی ہوگی۔ اسکے لئے سپیشل ہینگرس(ایئرکرافٹ رکھنے کی جگہ)بھی فرانس ہی تیار کریگا۔

پرشن: رافیل ڈیل میںoffset clauseکیا ہے؟
-یہ بھی اس سمجھوتے کا ایک مہتوپورن حصہ مانا جا رہا ہے۔offset clause (ایک ایسی شرط جو اس قرار کا حصہ ہے لیکن استعمال دوسری جگہ ہوگا)کے مطابق,فرانس اس قرار کی کل راشی کا قریب50فیصدی بھارت میں رکشا اپکرنوں اور اس سے جڑی دوسری چیزوں میں نویش کریگا۔

X
ستمبر2019میں پہلا رافیل بھارت پ�ستمبر2019میں پہلا رافیل بھارت پ�
Bhaskar Whatsapp

Recommended

Click to listen..
Web Tranliteration/Translation