Loading...
دینک ٹربیون» Newsپردھانجی کے پکوڑے-دینک ٹربیون

ہریانہ میں ایمس کے لئے جگی امید !    نریکشن کرنے گئی بیڈیپیؤ ٹیم کے ساتھ کی ہاتھاپائی !    نقلی سونا دیکر ٹھگے ساڑھے4لاکھ !    ہوٹل سے ایک ایک کر نکل رہے بھاجپا ودھایک !    آکروشت ودیارتھیوں نے لگایا جام !    سوہنا میں کمرے میں بند ملے بچے,ماں لاپتہ !    ادھک وصولی پر کورٹ کا کھٹکھٹایا دوار !    کھیلو انڈیا ہاکی میں کروکشیتر کے کھلاڑیوں کا دھمال !    راجستھان رایلس کے مالک بیچینگے حصے داری !    انجیکشن کا استعمال کرنے والے کھلاڑی پر2سال کے پرتیبندھ کا پرستاؤ !    

پردھانجی کے پکوڑے

Posted On November - 15 - 2018

اپنے سائکل والے کانگریسی پردھانجی سرخیاں بٹورنے کا کوئی موقع نہیں چھوڑتے۔ پارٹی میں اپنے ورودھی پورو سی ایم بھوپیندر سنگھ ہڈا کے رتھ کے مقابلے سائکل یاترا شروع کرنے کی بات ہو یا پھر چنڈیگڑھ میں مورچابندی کی,وہ ہمیشہ آگے رہتے ہیں۔ اب یہ سنیوگ ہی ہے یا پھر اسکے پیچھے پردھانجی کی رننیتی ہے که جب بھی سانگھی والے تاؤ کا چنڈیگڑھ پرواس ہوتا ہے,پردھانجی بھی ایک دن پہلے یا بعد میں چنڈیگڑھ کا پروگرام بنا لیتے ہیں۔ برہسپت وار کو تاؤ نے پردیشبھر کے کانگرسیوں کی چنڈیگڑھ میں بیٹھک بلائی تو پردھانجی نے بدھوار کو ہی پنجور کی ایچئیمٹی فیکٹری میں جاکر کڑھاہی چڑھا دی۔ فیکٹری بند کرنے کا ورودھ انہوں نے پکوڑے تل کر کیا۔ لگے رہو پردھانجی۔
میرے نورتن
راجنیتی میں ہر کوئی ہر کسی کو پسند آئے,یہ سمبھو نہیں۔ انیلو میں بھی کچھ ایسا ہی ہو رہا ہے۔ اپنے ڈاکٹر صاحب یعنی اجے چوٹالا کو جو چہرے پسند نہیں,بلو بھائی یعنی ابھے چوٹالا کے وہی پسندیدہ ہیں۔ دگوجیہ چوٹالا انیلو کے پردھان مہاسچو آر ایس چودھری کو پارٹی اور پریوار کو توڑنے کا مکھیہ ساجشکرتا مانتے ہیں۔ وہیں پارٹی کے راشٹریہ پروکتا رہے کیسی بانگڑ کو پردیش پروکتا پروین اترے کے لوکدلی ہونے پر سندیہ تھا۔ بلو بھائی نے دونوں کو ہی اپنا سب سے قریبی اور اہم ثابت کرتے ہوئے صاف کہہ دیا که چودھری صاحب تو انیلو میں تب سے ہیں,جب ہم پیدا بھی نہیں ہوئے تھے۔ اترے کو اپنے نورتنوں میں بتاتے ہوئے بلو نے کہا,پروین اترے نے تو پارٹی کے لئے پریوار کو بھی چھوڑا ہوا ہے۔ ان جیسا سنگھرششیل اور بلدانی کوئی نہیں۔ اب یہ تو نجی پسند اور ناپسند کا معاملہ ہے,اس میں آپ اور ہم چپ ہی رہیں تو بہتر ہوگا۔
نیتاجی غائب
انیلو کے کم سے کم آدھا درجن ودھایک‘انڈرگراؤنڈ’ہیں۔ بدھوار کے گھٹناکرم کے بعد سے ہی انکا عطا پتہ نہیں ہے۔ موبائل فون بھی رینج سے باہر ہے۔ چرچائیں طرح طرح کی ہیں۔ ایک پکش کہہ رہا ہے که17کو جیند میں انیلو پردیش کاریہ کارنی میں سبھی ودھایک پہنچیں,اسکے لئے‘پختہ’پربندھ کیا گیا ہے۔ دوسرا خیمہ کہہ رہا ہے که اسی دن جیند میں اجے چوٹالا کے شکتی پردرشن کو دیکھتے ہوئے یہ لکا چھپی کا کھیل کھیلا گیا ہے۔‘غائب’ہوئے ودھائکوں میں سے تین تو باگڑی بیلٹ کے ہیں۔ تینوں کے ہی نرواچن شیتر پنجاب سے سٹے ہوئے بتائے گئے ہیں۔ اب راجنیتی چیز ہی ایسی ہے۔
پارٹی کا اعلان
ہریانہ کی سیاست کا سینٹر مانا جانے والا جیند17نومبر کو نئی راجنیتک عبارت لکھنے جا رہا ہے۔ اپنے ہی پریوار اور پارٹی سے الگ ہونے کے بعد پورو سانسد اجے سنگھ چوٹالا نئی راہ پکڑ سکتے ہیں۔ اجے خیمہ الگ راجنیتک دل بنانے کی راہ تو پہلے ہی تے کر چکا تھا,لیکن اسکی ودھوت گھوشنا دسمبر میں کرنے کی یوجنا تھی۔ اب بدلے ہوئے حالات میں یہ کام سمیہ سے پہلے ہو سکتا ہے۔ اس کام کے لئے17نومبر کی تاریخ سب سے بہتر معنی جا رہی ہے۔ پنڈتوں نے بھی آکلن شروع کر دیئے ہیں۔ بہت سمبھو ہے که17کو ہی نئی پارٹی کے ساتھ ساتھ نئے بینر تلے پردیش سطر کی ریلی کا بھی اعلان ہو جائے۔ دیکھا جائے تو آگامی لوک سبھا ایوں ودھان سبھا چناووں میں اب وقت بھی کم ہی بچا ہے۔ ایسے میں اجے کو جو بھی کرنا ہے,ابھی کرنا ہوگا۔ اب دیر کی تو بہت دیر ہو سکتی ہے۔
ہڈا کا ماسٹر سٹروک
جیند ودھان سبھا کے اپ چناؤٔ کا اعلان تو جب ہوگا تب ہوگا,لیکن اپنے سانگھی والے تاؤ نے پہلے ہی ماسٹر سٹروک مار دیا ہے۔ پورو منتری ایوں جیند میں اچھی پکڑ رکھنے والے پورو منتری برج موہن سنگلا کے بیٹے انشل سنگلا کے ہاتھ کانگریس کے ہاتھ سے ملوانے میں تاؤ کامیاب رہے ہیں۔ اپنے کھٹر کاکا نے پچھلے دنوں پورو ودھایک سو.ہری چند مڈڈھا کے بیٹے کرشن مڈڈھا کو بھاجپا میں شامل کروا اسکی شروعات کی تھی۔ بتاتے ہیں که اس اپ چناؤٔ میں جاتگت سمیکرن کافی کام کرینگے۔ اسی کو دھیان میں رکھتے ہوئے پہلے کاکا اور اب تاؤ نے اپنی چال چل دی۔ اب باری وپکش کے نیتاجی یعنی اپنے بلو بھائی اور الگ راہ پکڑ چکے اجے اور دشینت چوٹالا کی ہے۔ یہ تو اب صاف ہے که دونوں کے الگ الگ امیدوار ہی میدان میں ہو نگے۔ ویسے سنگلا پر نظریں اور بھی کئی لوگوں کی تھی,لیکن تاؤ باجی مار لے گئے۔
مودی کی ریلی
پردھان منتری نریندر مودی ایک بار پھر ہریانہ آ رہے ہیں۔19نومبر کو کیئیمپی ایکسپریس وہ کا شبھ ارمبھ کرینگے۔ اسی دن گرگرام کے سلطانپور میں بڑی ریلی ہوگی۔ بھاجپا اسے اتہاسک بنانے میں جٹی ہے۔ چار لوک سبھا شیتروںگرگرام,فریدآباد,روہتک اور سونی پت کے نیتاؤں ایوں ورکروں کی بھیڑ جٹانے کے لئے ڈیوٹی لگا دی گئی ہے۔ یہ بھی پرچار کیا جا رہا ہے که اسی ریلی کے ذریعے مودی مشن 2019یعنی آگامی لوک سبھا چناووں کا آغاز کرینگے۔ ایک چرچا جہاں اس بات کو لیکر ہے که ورکنگ ڈے یعنی سوموار کے دن ریلی کرکے بھاجپا بھیڑ کیسے جٹائیگی۔ وہیں دوسری اور اپنے اہیروال والے بڑے راؤ صاحب یعنی اندر جیت سنگھ نے پھر سے بڑا بیان دے دیا ہے۔ ریلی کی تیاریوں کے دوران کہہ دیا که اگر ریلی میں بھیڑ نہیں جٹی تو پھر پردیش میں بھاجپا کی سرکار بھی نہیں آئیگی۔ ویسے نیتاؤں کے دماغ سے یہ بات پتہ نہیں کب نکلیگی که ریلیوں کی بھیڑ ہمیشہ ووٹوں میں نہیں بدلہ کرتی۔
چٹھی پر بوال
پورو سانسد اجے چوٹالا کو انیلو کے پردھان مہاسچو پد سے ہٹانے اور پارٹی سے نشکاست کرنے کے بعد نئی بحث چھڑ گئی ہے۔ انیلو پردیش ادھیکش اشوک اروڑہ نے جو نشکاسن پتر پڑھکر میڈیا کو سنایا,اسکے بارے میں دعویٰ کیا گیا که اس میں چوٹالا کے ہستاکشر نہیں ہیں۔ وواد بڑھا تو انیلو نے چوٹالا کے سائن والی چٹھی بھی جاری کر دی۔ یہ چٹھی جاری ہوتے ہی اجے خیمہ پھر لامبند ہو گیا۔ اب کہا گیا که جب چٹھی پر ہستاکشر12نومبر کو ہوئے تو تہاڑ جیل اتھارٹی نے اسے15نومبر کو کیوں ستیاپت کیا۔ جیل نیموں کے انوسار تو12نومبر کی چٹھی اسی دن ستیاپت ہونی چاہئیے۔ باتیں تو چوٹالا کے فرجی سائنوں کی بھی چل پڑی ہیں۔ اب جب پریوار میں ہی اتنا بڑا بوال چل رہا ہے تو سوابھاوک ہے چٹھیوں اور ہستاکشروں پر بھی بوال ہو سکتے ہیں۔
-دنیش بھاردواج


Comments Off onپردھانجی کے پکوڑے
1 Star2 Stars3 Stars4 Stars5 Stars (No Ratings Yet)
Loading...
Both comments and pings are currently closed.

Comments are closed.

سماچار میں حال لوکپریہ

Powered by : Mediology Software Pvt Ltd.
Web Tranliteration/Translation